مریم نواز نے مسلم لیگ (ن) کی رہنما عظمیٰ کاردار کو ’چھوڑ دیا‘

ایک عجیب و غریب لمحہ دکھایا گیا جب مریم نواز نے مسلم لیگ (ن) کی قانون ساز عظمیٰ کاردار کا ہاتھ ہٹایا جب مریم نواز نے انہیں گلے لگایا۔

مریم نواز نے مسلم لیگ ن کی رہنما عظمیٰ کاردار کو ’چھوڑ دیا‘

مریم پھر عظمیٰ کا بازو اس سے ہٹاتی ہے۔

ایک وائرل ویڈیو میں نومنتخب وزیر اعلیٰ مریم نواز اور مسلم لیگ ن کی قانون ساز عظمیٰ کاردار کے درمیان ایک عجیب و غریب لمحہ دکھایا گیا ہے۔

اس واقعے نے ایک ہنگامہ کھڑا کر دیا، لوگوں کو بات کرنے اور حیرت میں ڈال دیا کہ کیا ہوا ہے۔

مختلف پلیٹ فارمز پر بہت سی بحثیں اور قیاس آرائیاں ہوئیں کیونکہ لوگوں نے اس تبادلے کی حرکیات کو جاننے کی کوشش کی۔

ویڈیو میں مریم کو اپنی حلف برداری کی تقریب میں مصروف کمرے سے گزرتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔

جیسے ہی مریم چلتی ہے، عظمیٰ اٹھ کر اسے گلے لگاتی ہے۔ تاہم، مریم ہچکچاتے ہوئے دکھائی دیتی ہیں اور ایک بازو اپنے گرد باندھ لیتی ہیں۔

مریم پھر عظمیٰ کا بازو اپنے سے ہٹا لیتی ہے، اور بعد میں اسے مایوس نظر آتی ہے۔

سیاستدان پھر آگے بڑھ گیا۔

اس واقعے کو بہت سے ناظرین نے مریم کی جانب سے بدتمیزی کے مظاہرے سے تعبیر کیا۔

لوگ حیران تھے کہ دونوں سیاستدانوں کے درمیان کیا چل رہا ہے۔

اس کے باوجود، عظمیٰ کاردار نے اس معاملے پر اپنی خاموشی توڑ دی، اور دعویٰ کیا کہ مریم نے اپنا ہاتھ اس لیے ہٹایا کہ اس کے "ہاتھ تیل والے" تھے۔

اس نے وضاحت کی: "میں صبح ناشتہ کر رہی تھی، حلوہ پوری کھا رہی تھی، مریم صاحبہ پیچھے سے آئیں اور سلام کہا تو میں جذباتی ہو گئی۔"

عظمیٰ نے اٹھ کر مریم کو گلے لگایا اور سلام کیا۔

لیکن اس لمحے کی گرمی میں، عظمیٰ بھول گئی کہ اس کے ہاتھ ناشتے کے تیل سے "چکنائی" تھے۔

اس نے مزید کہا: "پھر اچانک مجھے احساس ہوا کہ میرے ہاتھ روغن ہیں تو میں نے اپنے ہاتھ [مریم] کو ہٹا لیے۔ مجھے محتاط رہنا چاہیے تھا۔"

اپنی وضاحت کے بعد عظمیٰ نے سوشل میڈیا پر ویڈیو کلپ پھیلانے اور مریم پر تنقید کرنے والوں کو بلایا۔

اس نے ان پر زور دیا کہ وہ ایسی "بیکار" چیزیں کرنا چھوڑ دیں اور دوسروں کا کچھ احترام کریں۔

سیاستدان نے مریم سے ملنے والے احترام پر اظہار تشکر کیا۔

اس نے اس بات پر زور دیا کہ شکر گزاری کے کوئی بھی الفاظ اس کی تعریف کی گہرائی کو صحیح معنوں میں نہیں پکڑ سکتے۔

لیکن ناظرین نے عظمیٰ کے اس دعوے پر یقین نہیں کیا کہ مریم نے اپنا ہاتھ اس لیے ہٹایا کہ وہ چکنائی والا تھا۔ سوشل میڈیا پر دونوں سیاستدانوں کو تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔

ایک شخص نے کہا: "آپ اس قسم کی توہین کے مستحق ہیں۔"

ایک اور تبصرہ کیا:

"یہ صرف یہ ظاہر کرتا ہے کہ سیاستدانوں کے پاس کوئی اخلاق نہیں ہے اور نہ ہی کوئی عزت نفس ہے۔"

ایک نے لکھا: "اچھی طرح سے مستحق۔ یہی وجہ ہے کہ اب آپ پی ٹی آئی میں نہیں رہے۔

ایک اور نے تبصرہ کیا: "ایسا لگتا ہے کہ کسی کی خود اعتمادی کم ہے۔"

دریں اثنا، حلف برداری کی تقریب کے بعد مریم نواز نے کہا کہ ان کا بطور وزیراعلیٰ پنجاب عہدہ ’’ہر عورت، ہر ماں، ہر بہن کی فتح‘‘ ہے۔

اس نے کہا: "آج، یہ جیت صرف میری نہیں ہے۔ یہ ہر عورت، ہر ماں کی جیت ہے… اور مجھے امید ہے کہ میں آخری نہیں ہوں۔

"خواتین کی یہ جیت میرے بعد بھی جاری رہنی چاہیے۔"



عائشہ ایک فلم اور ڈرامہ کی طالبہ ہے جو موسیقی، فنون اور فیشن کو پسند کرتی ہے۔ انتہائی مہتواکانکشی ہونے کی وجہ سے، زندگی کے لیے اس کا نصب العین ہے، "یہاں تک کہ ناممکن منتر میں بھی ممکن ہوں"





  • نیا کیا ہے

    MORE

    "حوالہ"

  • پولز

    کفر کی وجہ یہ ہے

    نتائج دیکھیں

    ... لوڈ کر رہا ہے ... لوڈ کر رہا ہے
  • بتانا...